نوازشریف نے آرمی چیف پر نہیں بلکہ فوج پر حملہ کیا ہے، عمران خان

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ نوازشریف نے جنرل باجوہ پر نہیں ، فوج پر حملہ کیا ہے، نوازشریف گیدڑ کی طرح دم دبا کر بھاگا، اوروہاں پر آرمی چیف اور ڈی جی آئی ایس آئی کیخلاف زبان استعمال کی، بھارتی اخبارات میں نوازشریف کی جمہوریت پسنددی کی تعریفیں ہو رہی ہیں، کل جو سرکس ہوئی، اس کی 11 سال پہلے پیشگوئی کی تھی کہ سب اکٹھے ہوجائیں گے۔

اسلام آباد میں ٹائیگرفورس کے کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ٹائیگرفورس کو خوش آمدید کہتا ہوں، جب سے 28مارچ کو ہم نے ٹائیگرفورس بنائی تھی، تب سے جتنی بھی سرگرمیوں میں حصہ لیا میں قوم کی طرف سے شکریہ ادا کرتا ہوں۔

انہوں نے کہا کہ رات کو جو سرکس ہوئی، اس پر بھی بات کروں گا، اس سرکس میں ڈیزل کے علاوہ اور بھی بڑے فنکار تھے۔رضاکار فورس کا معاشرے میں ایک بڑا مقام ہوتا ہے، کیونکہ آپ نے شہریوں کے حقوق کی حفاظت کرنا ہوتی ہے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ شوگر ملز طاقتور لوگوں کی ہیں، آصف زرداری اور شریف برادران کی شوگرملز ہیں۔ پہلی بار ایک تفصیلی انکوائری ہوئی ہے۔ اب ہم جو منصوبہ بندی لا رہے ہیں اس سے کہیں مہنگی چینی نہیں ملے گی۔

عمران خان نے کہا کہ 11سال پہلے پیشگوئی کی تھی کہ یہ سرکس ایک دن ہوگی،یہ سب اکٹھے ہوجائیں گے۔ جب ان کی چوری پر ہاتھ پڑے گا یہ سب اکٹھے ہوجائیں گے۔ وہاں دو بچوں نے بھی تقاریر کی تھیں۔ ان پر بات نہیں کرناچاہتا۔

انہوں نے کہا کہ تقریر کرنے والوں میں ایک نانی ہے لیکن میرے لیے بچہ ہے، اس کی وجہ ہے کہ انسان جب تک زندگی میں جدوجہد نہیں کرتا ، وہ لیڈر نہیں بن سکتا، ان بچوں نے زندگی میں ایک گھنٹہ حلال کا کام نہیں کیا لیکن وہ لیکچر دے رہے ہیں، دونوں اپنے باپوں کی حرام کی کمائی پر پلے ہوئے ہیں۔

وزیر اعظم نے مزید کہا کہ ٹیم میں 11 کھلاڑی ہوتے ہیں، 12ویں پر کیا بات کروں؟ لندن میں جس نے بیٹھ کر گفتگو کی، اس کی لندن جانے سے پہلے اور وہاں پر پہنچ کر تصویریں دیکھ لیں، شہبازشریف جیسی اداکاری بالی وڈ ایکٹر نہیں کرسکتے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہمارے فوجی اپنی جانیں دے رہے ہیں، پرسوں 20 فوجی جوانوں نے شہادت پائی۔ یہ ہمارے لیے اور ملک کیلئے اپنی جان کی قربانی دے رہے ہیں جبکہ یہ گیدڑ دم دبا کر باہر بھاگا، وہاں بیٹھ پر آرمی چیف اور ڈی جی آئی ایس آئی کیخلاف زبان استعمال کی۔

انہوں نے کہا کہ یہ وہ نوازشریف ہے، جو جنرل جیلانی کے گھر کے اوپر سریا بناتے ہوئے منسٹر بنا، پھر ضیاء الحق کے جوتے پالش کرکے وزیراعلیٰ بنا۔ اس کی کرپشن کی رپورٹ اس وقت کے ڈی جی آئی ایس آئی نے سپریم کورٹ میں رپورٹ جمع کرائی۔

وزیراعظم نے مزید کہا کہ ملک کی بدقسمتی یہ ہے کہ ہماری عدالتوں نے اس کی ہمیشہ مدد کی، آصف زرداری کو 2 مرتبہ جیل میں رکھا، حدیبیہ ملز کیس آصف زرداری نے نوازشریف پر بنایا تھا، زرداری اور نوازشریف وہ ہیں، جن پر دو کتابیں لکھی گئی ہیں، اس میں ہے کہ انہوں نے کس طرح غداری کی، ایک کتاب میں لکھا ہے کہ بے نظیر بھٹو بلاول کو بتا رہی ہیں کہ کس کس کے اکاؤنٹ میں پیسے پڑے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ یہ وہ لوگ ہیں جو پیسے کیلئے ملک کو بیچ سکتے ہیں۔ ان جیسا سلوک ملک کے ساتھ میر جعفر اور میر صادق نے کیا تھا۔ یہ حملہ جنرل باجوہ پر نہیں فوج پر ہے، یہی بات مودی کررہا تھا۔

وزیراعظم کے مطابق بھارتی اخبارات میں نوازشریف کی تعریفیں ہو رہی ہیں۔ میں نے مودی کی دنیا میں اصل فاشسٹ تصویر دکھائی ہے۔ آج ہندوستان دنیا کو دکھا رہا ہے کہ نوازشریف بڑا جمہوریت پسند ہے، ان کو یہ نہیں پتا کہ انہوں نے سپریم کورٹ پر حملہ کرایا، ضیاء الحق کی چوسنی منہ میں لے کر آیا۔ اس کیلئے عدلیہ تب تک ٹھیک ہے جب ساتھ کھڑی ہے۔ جب عدلیہ کا پانچ رکنی بنچ اس کو سزا دیتا ہے تو کیوں کہتا مجھے کیوں نکالا؟ لوگوں کے سامنے بے شرمی کے ساتھ جھوٹ بولتے ہیں۔ 

عمران خان نے مزید کہا یہ سب آرمی کیخلاف بات کرتے ہیں الیکشن کی رات جب سیالکوٹ کا رنگ باز عثمان ڈار سے ہار نے لگا تو جنرل باجوہ کو کال کی جنرل صاحب میں الیکشن ہار رہا ہوں میری مدد کریں اور وہ رونے لگا ۔ واضح رہے کہ عثمان ڈار کے مقابلے میں مسلم لیگ ن کے خواجہ آصف الیکشن میں کھڑے تھے۔

انہوں نے کہا کہ جب معاشرے میں مشکلات آتی ہیں تو زندہ معاشرے میں لوگ خود حکومت کی مدد کو آ جاتے ہیں۔ جب میں شوکت خانم کیلئے پیسا اکٹھا کرنے نکلا تو کسی نے کہا سکولوں میں جاؤ، وہاں سے مدد مانگو، آپ جیسے رضاکاروں نے پیسا اکٹھا کیا اور شوکت خانم بنایا، یہ دنیا کا واحد ہسپتال ہے جہاں 75فیصد لوگوں کا مفت علاج ہوتا ہے۔ ہمیں اب آپ کی ضرورت پڑے گی۔ شجر کاری میں ضرورت ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ ماحولیاتی تبدیلیوں کے باعث غلط ٹائم پر بارشیں ہوئیں، جس سے گندم بحران پیدا ہوا۔ اب ہم نے درخت ہی نہیں اگانے، بلکہ دریاؤں کو صاف کرنا ہے، ابھی بہت کام کرنا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس وقت ملک میں مہنگائی ہے، جس کی تین وجوہات ہیں، روپیہ گرگیا ،ایک تو 40 ارب ڈالر کا تجارتی خسارہ تھا، ڈالر اوپر جاتا ہے اور روپیہ جب گرتا ہے تو چیزیں مہنگی ہوجاتی ہیں، گیس پٹرول، ڈیزل اور سب چیزیں مہنگی ہوجاتی ہیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ ہم 60 فیصد دالیں باہر سے لیتے ہیں، چیزیں جو امپورٹ کرتے وہ سب مہنگی ہوگئی۔ گندم کی کٹائی کے وقت بارشیں ہوئی اور گندم کم ہوگئی، ہمارے ملک میں گندم کا خسارہ ہوگیا، گندم کے ذخائر کا اندازہ لگانے والا سسٹم ہی خراب تھا، پھر ہم نے گندم امپورٹ کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ گندم کی ذخیرہ اندوزی کی جا رہی ہے۔ ذخیرہ اندوزی لعنت ہے، ٹائیگرفورس کا کیا کام ہے؟ ٹائیگرفورس نے کہیں جا کر مداخلت نہیں کرنی، بلکہ موبائل فون پر تصویر بنا کر شکایات پورٹل پر ڈال دینی ہے۔

انہوں نے کہا کہ اگر مداخلت کی تو ایسے لوگ شامل ہوجائیں گے جو دکانداروں کو بلیک میل کرکے پیسا بنائیں گے۔

ٹیگ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

We are working hard for keeping this site online and only showing these promotions to get some earning. Please turn off adBlocker to continue visiting this site