سپریم کورٹ: بحریہ ٹاؤں کی 460 ارب کی ادائیگی میں 3 سال کی مہلت کی درخواست مسترد

سپریم کورٹ نے بحریہ ٹاؤن کراچی عملدرآمد کیس میں 460 ارب روپے کی ادائیگی کے لیے 3 سال کی مہلت دینے کی درخواست مسترد کر دی۔

سپریم کورٹ نے کیس کا مختصر فیصلہ سنا دیا۔ تفصیلی فیصلہ بعد میں جاری کیا جائے گا۔

جسٹس اعجاز الاحسن کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے کیس کی سماعت کی۔

بحریہ ٹاؤن کے وکیل نے عدالت سے استدعا کی کہ کورونا وائرس کے باعث دنیا بھر کے کاروبار ختم ہو کر رہ گئے ہیں، اکنامک رپورٹ کے مطابق لاکھوں افراد بے روزگار ہوئے ہیں۔

جسٹس منیب اختر نے ریمارکس دیے کہ آپ دوسرے کاروباروں کو چھوڑیں اور اپنا بتائیں کہ بحریہ ٹاؤن کو کیا نقصان ہوا ہے، جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ حکومت کہہ رہی ہے کہ معیشت دوبارہ ٹریک پر آچکی ہے، دنیا کے نہیں، بحریہ ٹاؤن اپنے اعدادو شمار دکھائے۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ کراچی پروجیکٹ تو بحریہ پہلے ہی فروخت کر چکا ہے، جسٹس منیب اختر نے ریمارکس دیے کہ سپریم کورٹ کوئی بنک تو نہیں جہاں مذاکرات کر کے رعایت لی جائے۔

بعد ازاں عدالت نے مختصر فیصلہ سناتے ہوئے بحریہ ٹاؤن کی درخواست مسترد کر دی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
سپریم کورٹ: بحریہ ٹاؤں کی 460 ارب کی ادائیگی میں 3 سال کی مہلت کی درخواست مسترد is highly popular post having 3 Twitter shares
Share with your friends
Powered by ESSB

Adblock Detected

We are working hard for keeping this site online and only showing these promotions to get some earning. Please turn off adBlocker to continue visiting this site