آئی ایم ایف پروگرام کیلئے مالی مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا: وزیراعظم

لاہور(نقارخانہ مانیٹرنگ ڈیسک) وزیراعظم شہباز شریف نے کہا ہے کہ ملک کو غربت سے نجات دلانے کی بجائے سیاسی جماعتیں باہم متصادم ہیں، آئی ایم ایف پروگرام پرعملدرآمد کیلئے ہمیں مالی مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا۔معروف برطانوی جریدے اکانومسٹ میں اپنے مضمون میں انہوں نے لکھا کہ بدقسمتی سے ہمارا سیاسی ماحول بری طرح منقسم ہو رہا ہے، ملک کو غربت سے نجات دلانے کی بجائے سیاسی جماعتیں باہم متصادم ہیں، پاکستان 60 کی دہائی میں مثبت سمت میں گامزن تھا، 60 کی دہائی میں پاکستان ایشین ٹائیگر بننے کی تیاری کررہا تھا، 2022 میں ہم خود کو معاشی بحران میں پھنساہوا پارہے ہیں.عالمی برادری اس وقت مشکل دور سے گزر رہی ہے، ایک طرف اشیائے ضروریہ کی بڑھتی قیمتوں کا چیلنج درپیش ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ دوسری طرف امریکا کو تاریخی مالیاتی خسارے جبکہ یورپ کو جنگ کا سامنا ہے، تین نمایاں مسائل کے باعث ہماری ترقی کا سفر رک گیا ہے، ترقی کے اہم عناصرتعلیم، صحت اور بنیادی ڈھانچے پر خاطرخواہ رقم خرچ نہیں کی گئی۔شہباز شریف نے کہا کہ پاکستان کو غیرذمہ دارانہ بھارتی رویے اور افغان مہاجرین جیسی مشکلات بھی درپیش ہیں، پاکستان کیلئے عالمی سطح پر مواقع میں کمی سے بھی ہماری مشکلات بڑھی ہیں، پاکستانی کمپنیاں مسابقتی فضا میں کام کرنے کی بجائے مقامی سطح تک محدود ہیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کل پیداوار کا 15 فیصد سرمایہ کاری جبکہ 10 فیصد برآمدات پر خرچ کرتا ہے، پاکستان میں براہ راست بیرونی سرمایہ کاری جی ڈی پی کے ایک فیصد سے بھی کم ہے.یہ اعدادو شمار ہمارے معاشی نظام کی خامیوں کی نشاندہی کرتے ہیں۔وزیراعظم نے لکھا کہ پاکستان 75 برس کا ہوگیا ہے، اب ہمیں سنجیدگی سے اپنا جائزہ لینا چاہیے، پاکستان دنیا کا 5واں بڑا ملک ہے جہاں ہر 3 میں سے 2 افراد کی عمر30 سال سے کم ہے، پاکستانی شہریوں کی سالانہ فی کس آمدن 1798ڈالرہے، ہماری آبادی کے ہرتیسرے فرد کی یومیہ آمدن 3.20ڈالر سے بھی کم ہے۔شہباز شریف نے کہا کہ پاکستان کی ایک چوتھائی سے بھی کم خواتین گھرسے باہرکام کرتی ہیں، ہماری آبادی کا ایک تہائی حصہ مکمل ناخواندہ ہے.موجودہ معاشی بحران سے نکلنا ہماری اولین ترجیح ہے.2022 صرف ہمارے لیےنہیں بلکہ پوری دنیا کیلئے مشکل سال ہے، آئی ایم ایف پروگرام پرعملدرآمد کیلئے ہمیں مالی مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا.عوامی خدمات کے بدلے میں لوگوں کو ٹیکسوں میں اپنا مناسب حصہ ڈالنا ہوگا، یقین ہے کہ آئی ایم ایف پروگرام پر عملدرآمد ہمارے لئے محفوظ راستہ ہے.درپیش چیلنجز ہمارے لئے مواقع بھی فراہم کررہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ اگر ہم بنیادی مسائل پر قابو پالیں تو قسمت بدلنے میں کوئی مشکل نہیں، جمہوریت میں ہمیشہ سیاسی اختلافات ہوتے ہیں، اختلافات کے ساتھ کچھ اصولوں پر عمل پیرا ہونا ضروری ہے۔ ہمیں مالی معاملات ،انسانی وسائل ، میرٹ کی بالادستی اور امن پرمتفقہ لائحہ عمل اپنانا چاہئے، پنجاب سپیڈ کے بعد ہم پاکستان سپیڈکے ساتھ آگے بڑھیں گے،اتحاد اور نظم و ضبط کے ساتھ پاکستان 100ویں سالگرہ پر مختلف ملک ہوگا.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button

Adblock Detected

We are working hard for keeping this site online and only showing these promotions to get some earning. Please turn off adBlocker to continue visiting this site