اس ملک میں ہر شخص پریشان سا کیوں ھے؟

شفیق لغاری

پٹرول مہنگا  ہے نا بجلی عوام نے پیدل چلنا شروع کردیا ھے، موٹر سائیکلیں گھروں کے کباڑخانے میں پھینک دی ھیں
انھیں معلوم ھوگیا ھے پیدل چلنے سے صحت ٹھیک رہتی ھے-

عوام میں پیار محبت بڑھ گیا ھے، کوئی آدمی اکیلے میں کھانا نہیں کھاتا، ہوٹل میں ایک پلیٹ  دو دو آدمی مل کر کھانے لگے ھیں اور کچھ شر پسند عناصر نے بجلی مہنگی ھونے کا شور مچا رکھا ھے حالاں کہ عوام قناعت پسند ھوگۓ ھیں-

گھر کے تمام افراد ایک پنکھے کے نیچے سونے اور ایک بلب پر گزارا کرنے لگے ہیں-

بیت المال ویران پڑے ھیں ، کوئی حاجت مند نظر نہیں آتا۔ عملے کے افراد سارا سارا دن ضرورت مندوں کا انتظار کرکے شام کو واپس گھروں کو چلے جاتے ھیں-

چور اور ڈاکو بے روزگار ھوگئے ھیں ، فراغت اور فراوانی نے انھیں سست کردیا ھے
پولیس والے تھانوں میں بےکار بیٹھے اونگھ رہے ہیں-

سودا سلف کھانے پینے کی اشیاء اور گوشت ترکاری سے بازار بھرے پڑے ھیں کوئی خریدار نہیں۔ ہر کسی کے گھر میں ہر چیز وافر مقدار میں موجود ھے-

ہر گلی کے نکڑ پر ایک ڈاکٹر بیٹھا ھے۔  اسپتالوں کے سامنے میڈیکل اسٹوروں کی قطاریں ھیں جو دوائیوں سے بھرے پڑے ھیں-

خوشحالی اور امن وامان کا یہ عالم ھے

کہ عوام کڑاہی گوشت کھاتے اور گلیوں بازاروں میں سکے اچھالتے پھرتے ہیں-

پھر بھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس ملک میں ہر شخص پریشان سا کیوں ھے؟

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

Adblock Detected

We are working hard for keeping this site online and only showing these promotions to get some earning. Please turn off adBlocker to continue visiting this site