توہین رسالت کے الزام میں قتل کیا گیا شخص امریکی شہری نکلا

پشاور کی عدالت میں قتل ہونے والا توہین رسالت کا ملزم طاہر احمد نسیم امریکی شہری تھا، امریکی سٹیٹ ڈیپارٹمنٹ کے ٹویٹر اکاؤنٹ نے اس کی تصدیق کر دی ہے۔

سٹیٹ ڈیپارٹمنٹ نے اپنے ٹویٹ میں حکومت پاکستان سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ فوری ایکش لے اور ایسی اصلاحات کرے جن سے مستقبل میں ایسے شرمناک المیہ کا اعادہ نہ ہو۔

یاد رہے کہ پشاور کے ایڈیشنل سیشن جج شوکت علی کی عدالت میں پیشی پر آئے ہوئے طاہر نسیم کو ایک نوجوان نے گولی مار کر ہلاک کر دیا تھا۔

مقتول طاہر احمد نسیم پشاور کے نواحی علاقے اچینی کا رہائشی تھا، اس پر دو سال سے توہین رسالت کا کیس چل رہا تھا۔

پولیس نے گولی چلانے والے نوجوان خالد ولد عبدالغنی کو گرفتار کر لیا ہے، اس کا کہنا ہے کہ طاہر نسیم نے اس کے سامنے توہین رسالت کی ہے جس کی وجہ سے اس نے مقتول پر گولی چلائی ہے۔

ٹیگ

کمنٹ

  1. یہ ممالک تو ھر ایسے شخص کے تحفظ میں آجاتے ھیں جو مسلمانوں کے دینی جزبات سے کھیلتا ھے بنگلہ دیچ کی تسلیمہ نسرین سے لیکر سلمان رشدی تک سب کو یہ لوگ تحفظ دیتے ھیں ھمری ریاستی اداروں کی زمداری ھے کہ وہ ایسے اقدامات کریں جس سے ایسے کسی شخص کو اسطرح کے بیانات یا حرکت کی جرآت نہ ھو

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

We are working hard for keeping this site online and only showing these promotions to get some earning. Please turn off adBlocker to continue visiting this site
توہین رسالت کے الزام میں قتل کیا گیا شخص امریکی شہری نکلا is highly popular post having 3 Twitter shares
Share with your friends
Powered by ESSB